مولانا سعد کاندھلوی صاحب کی مخالفت کا اثر شروع ہوا

اہم پیغام سب کو معلوم ہونا چاہیےدیکھیں اور شیر کریں!

حضرت جی مولانا سعد کاندھلوی صاحب کی مخالفت کا اثر شروع ہوا زہیر الحسن سہارنپوری کے رشتے داروں پر

بروز پیر 7مئی کو زہیر الحسن سہارنپوری کے چھوٹے بھائی صہیب الحسن اور خبیب الحسن کے خسر ابا کا چندہ کرنا ممنوع کردیا گیا مظاہر علوم سہارنپورکی طرف سے دراصل مسئلہ تھا کہ صہیب اور خبیب کے خسر ابا تقریبا تیس سال سے مدرسہ مظاہر علوم کا چندہ کیا کرتے تھے بہرحال گزشتہ کئ سالوں سے چندے میں گڑبڑ شروع کی اور انکا حساب زہیر الحسن سہارنپوری کے خسر مولوی شاہد خود لیا کرتے تھے لیکن اس بار مظاہر علوم کے ناظم اعلی نے حساب لیا اور جب حساب میں ایرا پھیری دیکھی تو

مدرسہ مظاہر علوم نے طے کیا کہ یہ دونو ائندہ چندہ نہ کریں اور مدرسہ نے یہ بھی طے کیا کہ ان دونوں کی سال گزشتہ کے چندے کی تحقیق بھی کی جائے اور ناظم صاحب نے ان دونو کو خوب ڈانٹا اور کہا کہ تم اب کئی سالوں سے چندہ اتنا کم کیوں لاتے ھو مولوی شاہد تمھاری شفارش اسلئے کریں کیونکہ تم مظاہر علوم کے خرچہ پر جاو اور چندہ مولوی شاہد اور زہیر الحسن سہارنپوری کے لئے کرو اپکو اندازہ ھو گا کہ زہیر الحسن سہارنپوری کے سارے ماموں سارے بہنوئیوں کا گزارہ صرف

چندہ ھے اور مولوی شاہد کے سب بیٹے اور سب داماد بھی چندے پر ھی گزر بسر کریں اور یہ سب فرضی چندہ کرتے ھیں ابھی گزشتہ ماہ ساجد اور راشد دونوں ملیشیا کے چندے کے سفر پر گئے تھے اور فرضی چندہ کرتے ھوے پکڑے گئے تھے یہ دونوں زہیر کے ماموں اور مولوی شاہد کے بھائ ھیں اللہ پاک ان چندہ خوروں سے مدرسہ مظاہر علوم کی اور خاندان حضرت شیخ رح کی حفاظت فرمائے آمین .
نوٹ یہ سب حضرات جہاں بھی مدرسہ مظاہر علوم کےلئے اگر چندہ کرتے پائے جائیں تو آپ فوراً ناظم یا شوری کے کسی بھی فرد کو مطلع کریں اور علاقے کی پولیس کے حوالے کردیں کیوں کہ ان سب کا مدرسہ مظاہر علوم سے کوئی لینا دینا نہیں ہے .

من جانب
مدرسہ مظاہر علوم سہارنپور