اسلام میں عورتوں کے حقوق دوسری قسط

( مذکورہ عنوان کی یہ دوسری قسط ہے )
اسلام نے بتلایا اے لوگو ! عورت اگر بیٹی ہے
تو یہ تمہاری عزت ہے ، اگر بہن ہے تو تمہاری ناموس ہے ، اگر یہ بیوی ہے تو تمہاری جیون ساتھی ہے اور اگر یہ تمہاری ماں ہے تو اس کے قدموں کے نیچے تمہارے لئے جنت ہے .

چنانچہ اللہ کے رسولﷺ نے فرمایا ” الجنۃ تحت اقدام الامھات ” قرآن کا حکم ہے “والدین کے ساتھ نیک برتاؤ کرو ” ( وبالوالدین افسانا ) بیوی کے حق میں فرمایا ” ھن لباس لکم وانتم لباس لھن ” وہ تمہارا لباس ہیں اور تم ان کا لباس ” اور بنی ذیشان نے فرمایا ” خیرکم خیر لاھلہ ” تم میں بہتر وہ ہے جو اپنی بیوی کیساتھ برتاؤ کرے ، دوسری حدیث میں فرمایا ” الدنیا کلھا متاع وخیر متاع الدنیا المراۃ الصالحۃ ” ساری دنیا نفع کا سامان ہے اور دنیا کا بہترین نفع کا سامان نیک عورت ہے .

بہن اور بیٹی کی پیدائش پر پر جنت کا دروازہ کھلنے کی بشارت دی گئی چنانچہ ہمارے نبی ﷺ نے فرمایا کہ جس آدمی کی دو بیٹیاں ہوں اور وہ ان کی اچھی تعلیم وتربیت کرے اور اور ان کا فرض ادا کرے تو یہ شخص جنت میں میرے ساتھ ہوگا جیسے ہاتھ کی یہ دو انگلیاں. اس طرح حبیب خدا حضرت محمد مصطفٰی ﷺ مردوزن دونوں کو تعلیم وترقی ، سماجی و معاشرتی یکساں حقوق و مواقع عطا کئے .

فرمایا ” طلب العلم فریضۃ علی کل مسلم ومسلمۃ ” یعنی علم کا حصول ہر مؤمن مردوعورت پر فرض ہے. مردوں کو حکم ہوا جو کچھ تم کھاتے پیتے ہو وہی اپنی عورتوں کو کھلاؤ پلاؤ ، انکے حقوق کی حفاظت کرو اور ان کی ہر تکلیف کو دور کرو.

( نوٹ : تسری قسط اگلی اشاعت میں )

مجیب الرحمان الندوی
مدرسہ فیض المنت ڈومریا

اپنا تبصرہ بھیجیں